Leave a comment

یہ سمے ہے جلوہ ہائے طور کا

غزل

یہ سمے ہے جلوہ ہائے طور کا
بن رہا ہے ایک سایہ نور کا

Ye samay hay jalwa haay e toor ka
Ban raha hay aik saya noor ka

سامنے جام مسرت ہے پڑا
کیا کروں میں اس دلِ رنجورکا

Saamnay jaam e masarrat hay paRa
Kia karon main is dil e ranjoor ka

بالیقیں ہے درد ہی کا راستہ
وہ اشارہ دے رہاہے دورکا

Bil-yaqeeN hay dard hi ka raasta
Wo ishara de raha hay door ka

گردنیں اکڑی ہیں اہل حکم کی
دار پر آیا ہے سر منصور کا

Gardanein akRi hein ehl e hukm ki
Daar par aaya hay sar mansoor ka

عشق کا مطلوب کوئی اور ہے
پڑگیاہے ماند جلوہ حور کا

Eshq ka matloob koi aor hay
PaR gaya hay maand jalwa hoor ka

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: