Leave a comment

الفت کے انتظام سے ہم آگے بڑھ گئے

غزل

لمحوں کے احترام سے ہم آگے بڑھ گئے

یوں وقت کے نظام سے ہم آگے بڑھ گئے

LamhoN k ehtiram say hum aage barh gaye

Yun waqt k nizam say hum aage barh gaye

 گرد۔ سفر میں تم نے کیا تھا ہمارے نام

اس درد کے مقام سے ہم آگے بڑھ گئے

Gard e safar main tum nay kia tha hamaray naam

Us dard k maqaam say hum aage barh gaye

کب تک مقام ہجر پہ ماتم کناں رہیں

الفت کے انتظام سے ہم آگے بڑھ گئے

Kab tak maqaam e hijr pe maatam kunaN rahein

Ulfat k intizam say hum aage barh gaye

 پھر سے جہان دل کی ہے تزئین نو شروع

پھر درد انہدام سے ہم آگے بڑھ گئے

phir say jahan e dil ki hay tazyeen e no shuroo

phir dard e inhidaam say hum aage barh gaye

وحدت سے لے کے کثرت انفاس کے گواہ

اک درجہ انقسام سے پم آگے بڑھ گئے

 Wahdat say le k kasrat e anfaas k gawah

Ik darja inqisaam say hum aage barh gaye

 اے منتقم مزاج چلے آؤ خشمگیں

اپنے تو انتقام سے ہم آگے بڑھ گئے

A muntaqim mizaaj chale aao khashmageeN

apne tu intiqaam say hum aage barh gaye

 یہ مسئلہ رہا کہ جہاں وہ رکے رفیع

اس حدٌ اختتام سے ہم آگے بڑھ گئے

 Ye masala raha k jahan wo rukay Rafi

Os hadd e ikhtitaam say hum aage barh gaye

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: