Leave a comment

دو گھڑی بات کرے مجھ پہ یہ احسان بہت

غزل

دو گھڑی بات کرے مجھ پہ یہ احسان بہت
گفتگو ہوتی رہے، ہائے یہ ارمان بہت

Do ghaRi baat karay, mujh pe ye ahsaan boht

Guftagoo hoti rahay, haaye ye armaan boht

کاش سمجھے کہ سبب ہے وہ شکیبائ کا
ورنہ اس دل کے لبھانے کو ہے سامان بہت

Kaash samjhay k sabab hay wo shakebaayi ka

Warna id dil k lubhanay ko hay samaan boht

اس نے کچھ سوچ کے چاہت کی حدیں رکھی ہیں
میں ہوں دیوانہ محبت میں، ہوں نادان بہت

Os nay kuch soch k chahat ki hadein rakhi hein

Main hoN deewana muhabbat main, hoN nadaan boht

میری شدت نے اسے خوف سے دوچار کیا

اس لیے بھی تو وہ بن جاتا ہے انجان بہت

Meri shiddat nay osay khof  say dochaar kia

Is liye bhi tu wo ban jaatay hein anjaan boht

پیار کے پھول کو مطلوب ہے دل کا پیالہ
یوں تو بازار میں مل جاتے ہیں گل دان بہت

Piyar k phool ko matloob hay dil ka piyala

YuN tu bazaar main mil jatay hein gul-daan boht

عشق کی راہ میں یہ سوچ گوارا نہ رہی
ہر قدم پر نئے زخموں کا ہے امکان بہت

Ishq ki raah main ye soch gawara na rahi

Har qadam par naye zakhmoN ka hay imkaan boht

وقت آیا تو ذرا مان نہ رکھا اس نے
عمر بھر جس پہ کیا کرتے تھے ہم مان بہت

Waqt aya tu zara maan na rakha os nay

Umr bhar jis pe kia kartay thay hum maan boht

غم ہو جاناں کا، غمِ دہر ہو آلام سے پُر
ہائے تڑپایا گیا حضرتِ انسان بہت

Gham ho jaanaN ka, gham e dahr ho alaam say pur

Haaye taRpaya gaya hazrat e insaan boht

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: