Leave a comment

پھر کوئی عفریت جنم دے گی مٹی

غزل

بادل کو صحرا کی خموشی کا غم ہے
جتنا کڑکے، برسے، اتنا ہی کم ہے

Baadal ko sehra ki khamoshi ka gham hay

Jitna kaRkay, barsay, utna hi kam hay

وقت دعا ہے، آؤ مل کر مانگیں وہ
جس کی خلش ہے، اپنے اندر جو کم ہے

Waqt e dua hay, Aao mil kar maangeiN wo

Jis ki khalish hay, apne andar jo kam hay

آدم کی اولاد انہیں تب تک مارے
جب تک بے بس اور لاچاروں میں دم ہے

Aadam ki olaad unhein tab tak maaray

Jab tak be-bas aor laacharoN main dam hay

پھر کوئی عفریت جنم دے گی مٹی
کوکھ جلی اک بار ہوئی پھر سے نم ہے

Phir koi ifreet janam degi Mitti

Kokh jali ik baar hui phir say nam hay

خوش رہنے کو سارے جتن کرڈالو تم
کیا سمجھے ہو، یار کا غم تھوڑا غم ہے

Khush rehnay ko saaray jatan kardaalo tum

Kia samjhe ho! yaar ka gham thoRa gham hay

رب نے رکھے ہیں عالم میں لاکھوں رنج
ان کا خمیر اک درد جدائی میں ضم ہے

Rab ne rakhe hein aalam main laakhoN ranj

In ka khameer ik dard e judaayi main zam hay

من کو جلاکر راکھ بنائے، ایسی آگ
عشق ہے، گر شعلے میں زندہ شبنم ہے

Man ko jalaa kar raakh banaaye aesi aag

Ishq hay, gar sholay main zinda shabnam hay

مجھ کو رفیع اب فرق نہیں پڑنے والا
خوش ہے یا نم دیدہ ہے، جو ہمدم ہے

Mujh ko Rafi ab farq nahi paRne wala

Khush hay ya namdeeda hay, jo hamdam hay

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: