2 Comments

وہ تو اک خواب تھا، جب تک اسے دیکھا میں نے

غزل

آج جب خود سے اسے میں نے گھٹاکر دیکھا
دل کی آنکھوں میں بہت دور تلک ڈر دیکھا

Aaj Jab khud se osay main ne Ghata kar dekha
Dil ki aankhoN main boht door talak dar dekha

مجھ کو لگتا ہے محبت کی کمی ہے مجھ میں
اس لیے پیاسی نظر سے اسے اکثر دیکھا

Mujh ko lagta he muhabbat ki kami he mujh main

Is liye piyasi nazar say osay aksar dekha

اس کے احساس کی دنیا میں گزاری اک عمر
سرد ہوتے ہوئے سورج کا بھی منظر دیکھا

Os k ahsaas ki dunya main guzaari ik umr
Sard hotay hoe sooraj ka bhi manzar dekha

وہ تو اک خواب تھا، جب تک اسے دیکھا میں نے
محو ہوکر، دو جہانوں سے نکل کر دیکھا

Wo tu ik khwab tha, Jab ose dekha main ne
Mahw hokar, do jahanoN se nikal kar dekha

ہاں، مبارک ہو اسے اس کی انا کی رفعت
میں نے آکاش میں تاروں کا پیمبر دیکھا

Han, mubarak ho osay os ki Ana ki raf’at
Main ne aakash main taaroN ka payambar dekha

میں بسا اس میں تھا، وہ ہی نہیں پایا جو سنبھال
لڑکھڑانے پہ رفیع اس نے بپھر کر دیکھا

Main basa os me tha, wo hi nahi paaya jo Sanbhaal
LaRkhaRanay pe Rafii os ne biphar kar dekha

Advertisements

2 comments on “وہ تو اک خواب تھا، جب تک اسے دیکھا میں نے

  1. آج جب خود سے اسے میں نے گھٹاکر دیکھا
    دل کی آنکھوں میں بہت دور تلک ڈر دیکھا

    اس کے احساس کی دنیا میں گزاری اک عمر
    سرد ہوتے ہوئے سورج کا بھی منظر دیکھا

    Ap ki gazal kay behtreen shair …. Bohat khoob

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: