Leave a comment

ایک تصویر جو کرمچ پہ اتر آئی ہے

غزل

مجھ کو معصومئ اظہار پہ حیرت حیرت
میرے بچوں کو ہے چہکار پہ حیرت حیرت

Mujh ko masoomi-e-izhaar pe herat herat

Meray bachoN ko hay Chehkaar pe herat herat

سب کو نے رنگئ دوراں کی شکایت لیکن

ہر طرف ایک سے آثار پہ حیرت حیرت

Sub ko ne-rang-e-doraaN ki shikayat lekin

Har tarfaf aik say aasaar pe herat herat

ایک تصویر جو کرمچ پہ اتر آئی ہے
درج ہے چہرہء فن کار پہ حیرت حیرت

Aik tasweer jo Kirmich pe utar aayi hay

Darj hay Chehra-e-fankaar pe herat herat

دیکھتا ہے یونہی منظر جو چھپاکر آنسو
اس کو ہے دیدہ سرشار پہ حیرت حیرت

Dekhta hay yunhi manzar jo chupaa kar aansu

Us ko hay deeda-e-sarshaar pe herat herat

دائرے سینے پہ بنتے نہیں دیکھے اس نے
ڈوبتے وقت تھی منجدھار پہ حیرت حیرت

Daayire seenay pe bante nahi dekhay os ne

Doobte waqt thi manjdhaar pe herat herat

اس کی آہوں کو تو بخشی تھی صبا کی خوش بو
نوحہء ہجر بنے یار پہ حیرت حیرت

Os ki aahoN ko tu bakhshii thi saba ki khusboo

Noha-e-hijr bane yaar pe herat herat

طائر_ وقت بدن نوچتا رہتا ہے رفیع
خستہ دل کو نہیں منقار پہ حیرت حیرت

Taayir-e-waqt badan nochta rehtaa hay Rafii

Khasta Dil ko nahi Minqaar pe herat herat

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: