Leave a comment

زخم سینے پہ مسکرا رہا ہے

غزل

مجھ کو ہمزاد یہ دکھا رہا ہے
دل ترا درد ہی اٹھا رہا ہے

Mujh ko hamzaad ye dikha raha hay

Dil tera dard hi utha raha hay

دفن کرکے میں خود کو آرہا ہوں
وہ ابھی ضبط آزما رہا ہے

Dafn kar k main khud ko, aa raha hoN

Wo abhi zabt aazma raha hay

درد کو نیند آگئی ہے لیکن
زخم سینے پہ مسکرا رہا ہے

Dard ko neend aagayi hay lekin

Zakhm seenay pe muskura raha hay

جانے کیوں انتظار ہے تمھیں اب
کیا یہ لاشا تمھیں بلا رہا ہے

Jaane kioN intizaar hay tumhein ab

Kia ye laasha tumhein bula raha hay

ٹیس خود ہی پہ مسکرا رہی ہے
داغ دل پر جو بلبلا رہا ہے

Tees khud hi pe muskura rahi hay

Daagh dil par jo bilbila raha hay

اس کی یادیں اڑی ہیں آہ بن کر
درد کا ایک سلسلہ رہا ہے

Us ki yaadein uRi hein aah ban kar

Dard ka aik silsila raha hay

اُن لبوں پر تھی شرمگیں ہنسی اور
میرے ہونٹوں پہ قہقہہ رہا ہے

Un laboN par thi sharmgeeN hansi aor

Meray hontoN pe qehqaha raha hay

میرے اور تیرے درمیاں، بتا اب
کتنی صدیوں کا فاصلہ رہا ہے

Meray aor teray darmiaNn bata ab

Kitni sadyoN ka faasla raha hay

وہ رویہ ترا، جو کھا گیا دل
اب تری ہمرہی کو کھا رہا ہے

Wo rawayya tera, jo khaa gaya dil

Ab teri hamrahi ko khaa raha hay

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: