Leave a comment

مرے وجود میں دل ٹوٹ کر بکھرتا ہے

طرحی غزل

ہر اک مقام پہ نقش سفر بناتا ہوں
جہاں ہو درد کی منزل، ادھر بناتا ہوں

Har ik maqaam pe naqsh-e-safar banata hoN

JahaaN ho dard ki manzil, udhar banata hoN

صحیفہٴ دل بے درد سے اترتی ہے
تو پھر میں درد کی تازہ خبر بناتا ہوں

Saheefa-e-dil-e-be-dard say utarti hay

Tu phir main dard ki taza khabar banata hoN

مرے وجود میں دل ٹوٹ کر بکھرتا ہے
میں کینوس پہ وہ چہرہ اگر بناتا ہوں

Meray wajood main dil toot kar bikharta hay

Main Canvas pe wo chehra agar banata hoN

کہ دل کے درد و الم میں کمی نہ رہ جائے
بہاکے خون میں اپنا جگر بناتا ہوں

K dil k dard-o-alam main kami na reh jaaye

Baha k khoon main apna jigar banata hoN

نہ جانے کیوں میں کبھی مطمئن نہیں ہوتا
گھروندے توڑ کے بار_ دگر بناتا ہوں

Na jaanay kioN main kabhi mutmaien nahi hota

Gharonday toR k baar-e-digar banata hoN

بہاکے آنسو انہیں خشک کرتا رہتا ہوں
میں درد ساز نہیں ہوں، حجر بناتا ہوں

Bahaa k aansu inheN khushk karta rehta hon

Main dard-saaz nahi hoN, hajar banata hoN

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: