Leave a comment

میرے چہرے پر جہنم میرے من کا پھر سے بھڑکا

غزل

میرے چہرے پر جہنم میرے من کا پھر سے بھڑکا
برف کے سورج میں آکر شعلہ تن کا پھر سے بھڑکا

Meray chehray par jahannum, meray man ka phir say bhaRka

Barf k sooraj main aakar, shula tan ka phir say bhaRka

کوہ اک احساس کا ہے، بوجھ اس پر ہے خلش کا
بے حسی کی اوس پڑ کر، دل دمن کا پھر سے بھڑکا

Koh ik ihsaas ka hay, bojh os par hay khalish ka

Be-hisi ki aos paR kar, Dil daman ka phir say bhaRka

دوزخوں سے ایک خواہش کے لیے گزرا ابھی تھا
حیف اے دل! وہ تصور اک عدن کا پھر سے بھڑکا

DozakhoN say aik khwahish k liye guzraa abhi tha

Haif ae dil! wo tasawwur ik adan ka phir say bhaRka

آسماں نے کیا اشارہ کردیا ہے آنکھ سے پھر
اک بجھا سا تل زمینوں کے ذقن کا پھر سے بھڑکا

AasmaaN ne kia ishara kardia hay aankh say phir

Ik bujha saa til zameenoN k Zaqan ka phir say bhaRka

عیش و عشرت میں مگن تھا، شست کی زد میں جو آیا
لی ہے انگڑائی فضا میں، تن زغن کا پھر سے بھڑکا

Aish-o-ishrat main magan tha, shist ki zad main jo aaya

Lee hay angRaayi fizaa main, tan zaghan ka phir say bhaRka

سانس خوش بو سے ہو ہم آہنگ کیوں کر، اے بہارو
صبح دم تنٌور لے کر من پون کا پھر سے بھڑکا

Saans khushboo say ho ham-aahang kioN kar, ae bahaaro!

Subh dam tannuur lekar, man pawan ka phir say bhaRka

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: