3 Comments

تیرے کوچے کی آخری شب میں

غزل

تم نہ تھے وسوسوں کے گھیرے تھے
گرد میرے بلا کے پھیرے تھے

Tum na thay, WaswasoN k ghairay thay

Gird meray bala k phairay thay

تیرے کوچے کی آخری شب میں
غم، خموشی، گھنے اندھیرے تھے

Teray koochay ki aakhri shab main

Gham, Khamoshi, Ghanay andheray thay

تم نے رکھا تھا سینت کر جن کو
سچ تو یہ ہے، وہ خواب میرے تھے

Tum nay rakha tha saint kar jin ko

Sach tu ye hay, wo khwab meray thay

دل میں پھر جشن کا اک عالم تھا

روح میں درد کے پھریرے تھے

Dil main phir jashn ka ik aalam tha

Rooh main dard k pharairay thay

کمرہ گھر کا گرا دیا آخر
خواہشوں کے جہاں بسیرے تھے

Kamra ghar ka gira dia aakhir

KhwahishoN k jahaN basairay thay

فاصلوں کی ڈگر پہ قدموں کے
سب نشاں میرے تھے، کہ تیرے تھے

FaasloN ki dagar pe qadmoN k

Sub nishaN meray thay, k tairay thay

جب تماشا محل میں برپا تھا
جھونپڑی میں قضا کے ڈیرے تھے

Jab tamasha Mahal main barpaa tha

JhonpRi main qaza k phairay thay

نیند میں ہم رفیع کچھ کچھ تھے
اور وہ بھی ملے سویرے تھے

Neend main hum Rafii kuch kuch thay

Aor wo bhi milay sawairay thay

Advertisements

3 comments on “تیرے کوچے کی آخری شب میں

  1. Wah kya baat hai Janab

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: