Leave a comment

ذات کی کہکشاں سے ہٹ کر ہے

غزل

ذات کی کہکشاں سے ہٹ کر ہے
وہ جو ضم ہے وجود کے اندر

Zaat ki kahkashaN say hat kar hay
Wo jo zam hay wujood k andar

آج تک چین سے نہ سوپایا
اک جہاں ہست و بود کے اندر

Aaj tak chain say na so paya
Ik jahaN hast-o-bood k andar

عشق کے شاہ کو پسند آئی
درد کی رو جنود کے اندر

Ishq k shah ko pasand aayi
Dard ki ro Junood k andar

اس کے ذروں میں رقص جاری ہے
آگ ہے اس جمود کے اندر

Is k zarroN main raqs jaari hay
Aag hay is jamood k andar

کیوں تڑپتی ہے، کیا ہے غم اس کو
ماتمی لے سرود کے اندر

KioN taRapti hay, kia hay gham is ko
Matami Lay sarood k andar

جانے کیا کیا چھپا کے بیٹھی ہے
ذات باری نمود کے اندر

Jaanay kia kia chupa k bethi hay
Zaat-e-baari namood k andar

ہیں فسانے ارب کھرب بکھرے
تیرے میرے شہود کے اندر

Hain fasanay arab kharab bikhray
Teray meray shuhood k andar

عاشقا! اٹھ کے گھر جلا اپنا
مسکرا موج دود کے اندر

Aashiqa, uth k ghar jala apna
Muskura moj-e-dood k andar

کیا کہوں اس گریز پائی کو
جو ہے تیرے ورود کے اندر

Kia kahoN is guraiz-paayi ko
Jo hay teray wurood k andar

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: