Leave a comment

یہ جام_ سرخ کسی شب اُچھلنے والا ہے

غزل

یہ جام_ سرخ کسی شب اُچھلنے والا ہے
مزاج_زیست یہیں سے بدلنے والا ہے

سرک رہی ہیں درون_مکاں قبائیں پھر
مزاج_یار برہنہ نکلنے والا ہے

ستم کیا کہ روایت نئ نئ ڈالی
یہ اژدہا تو مجھی کو نگلنے والا ہے

ترے دیار میں رقصاں رہا صدی بھر کو
خیال_یار ہے، پھر سے سنبھلنے والا ہے

پھر اس کے بعد اُسے بھی قرار آئے گا
سمے کے طاق سے لمحہ پھسلنے والا ہے

زوال پر ہیں ستارے مری امیدوں کے
تمھارے پیار کا سورج بھی ڈھلنے والا ہے

مرے نفس کی حرارت ہے حلقہء زنجیر
اب اس کے ضبط کا بندھن پگھلنے والا ہے

 Ghazal

Ye jaam-e-surkh kisi shab uchalnay wala hay

Mizaj-e-zeest yaheeN say badalnay wala hay

Sarak rahi hain daroon-e-makaaN qabayiN phir

Mizaj-e-yaar barehna nikalnay wala hay

Sitam kia k riwayat nayi nayi daali

Ye ajdaha tu mujhii ko nigalnay wala hay

Tiray dayar main raqsaaN raha sadi bhar ko

Khayal-e-yaar hay, phir say sanbhalnay wala hay

Phir is k bad usay bhi qaraar aayega

Samay k taaq say lamha phisalnay wala hay

Zawaal par hain sitaray meri umeedoN k

Tumharay piyar ka sooraj bhi dhalnay wala hay

Miray nafas ki hararat hay halq-e-zanjeer

Ab us k zabt ka bandhan phigalnay wala hay

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: