Leave a comment

اپنے خوابوں کو بیچتی ہے وہ

غزل

درد سے درد کھینچتی ہے وہ

اک بری لت ہے، سوچتی ہے وہ

میرے آنسو میں کون روتا ہے

میری آنکھوں سے پوچھتی ہے وہ

سرد پہروں میں اوڑھنی لے کر

دیر تک مجھ کو سوچتی ہے وہ

گرد میرے اجاڑ راتوں میں

کس اداسی سے ناچتی ہے وہ

نیند اس کو یونہی نہیں آتی

اپنے خوابوں کو بیچتی ہے وہ

اپنی آشُفْتَگی کو وہ جانے

گھاؤ اپنا جو نوچتی ہے وہ

دفن کرتی ہے کوکھ میں جب ایک

اک گماں اور سینچتی ہے وہ

کیا پتا، لوٹ کر نہ آئے پھر

سایہ ڈر کر دبوچتی ہے وہ

Dard say dard khenchti hay wo

Ik buri lat hay, sochti hay wo

Meray aansu man kon rota hay

Meri ankhoN say poochti hay wo

Sard pehroN main oRhni lekar

Dair tak mujh ko sochti hay wo

Gird meray ujaaR ratoN main

Kis udasi say nachti hay wo

Neend usko yunhi nahi aati

Apnay khwaboN ko baichti hay wo

Apni aashuftagi ko wo janay

Ghaao apna jo nochti hay wo

Dafn karti hay kokh main jab aik

Ik gumaN aor sainchti hay wo

Kia pata, loat kar na aaye phir

Saya dar kar dabochti hay wo

Advertisements

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: