4 Comments

!اے محبوب

!اے محبوب

تمھارے خیالات
محبت اور کرم نوازی کی
زندگی سے بھرپور توانائی
جو تم اپنے ساتھ لاتے ہو
ہمیشہ نعمت کی طرح محسوس ہوتی ہے

**

مجھے تم سے محبت ہے
لیکن زندگی حجابوں میں لپٹی ہے
انہیں پلٹتے پلٹتے
زندگی گزرجائے گی
اور ہمارے قلوب
جو جذبوں کی حرارت سے دھڑکتے ہیں
اور ہزاروں میل دوری سے بھی
ایک دوسرے سے مربوط رہتے ہیں
پگھل کر خاک نشیں ہوجائیں گے
اور ان میں دھڑکتے جذبے
مٹی کو نم کرکے
نمود کی کسی نئی تشریح کو جنم دیں گے

**

!اے میرے محبوب
کیا ہم واقعی محبت کرتے ہیں
یا محبت زدہ دل لے کر
خاک بسر
خود کو، یہ سمجھ کر دھوکا دیتے ہیں
کہ ہمارے تشنہ ہونٹ امرت سے آشنا ہوچکے ہیں
لیکن ہمارے جسم کیوں پگھل رہے ہیں
اب تب میں یہ رزق خاک ہونے کو ہیں
تھمارے ہونٹوں پر پپڑیاں جم چکی ہیں
کیا تم میرا عکس ہو
ہمارے بدن پانی بن کر پگھل رہے ہیں
اور تشنگی کا یہ عالم ہے کہ
زندگی کے صحرا میں
ریت کے ہر دوسرے ذرے میں
ایک سمندر ٹھاٹیں مارتا دکھائی دے رہا ہے
کیا ہم سرابوں سے نجات پانے کے لیے
اپنی اپنی زندگی دان کرسکتے ہیں

**

محبت کو سمجھنے کے لیے ہم زندگی بھر
جذبوں اور احساسات کے سمندر میں
غوطہ زن رہتے ہیں
آخری سانس کا ہچکولا
ہمیں ایسی دنیا میں بہاکر لے جاتا ہے
جہاں نہ محبت ہے نہ نفرت
جہاں بندگی کا واحد جذبہ
اذیت اور راحت کی ہر دوحالتوں میں
جھیل کی سطح کی مانند
ہموار رہتا ہے
لیکن کیا کوئی ہاتف غیبی ہمیں یہ خبر دے سکتا ہے کہ
خوبصورت جذبے کا تسلسل سے پروان چڑھنا ممکن ہے
اور یہ کہ
وقت کے ایک قلیل عرصے میں
زندگی کے نام سے گزرنے والے عجیب و غریب لمحات
کی چھلنی سے نکلنے والے انسانوں کا منتظر
اک ایسا جہاں ہے
جہاں انسان
اپنے اندر محبت کے مادے کو خود جنم دے سکے گا
اور کوثر کا پانی
اس کے اثر سے مٹھاس کی آخری حدوں کو چھولے گا
اگر ایسا ہے تو
,اے محبوب
آؤ، خوشی خوشی اپنی زندگیاں دان کردیں
لیکن کیا محبت نے ہمیں اتنا حوصلہ عطا کیا ہے
کہ ہم موت اور زندگی کے فلسفے کو
سمجھنے کے نازک مقام پر
پورے قد کے ساتھ کھڑے ہوسکیں

A mahboob!

Tumharay khayalaat

Muhabbat aur karam nawazi ki

Zindagi say bharpoor tawanaaii

Jo tum apnay sath latay ho

Hamesha ne’mat ki tarah mahsos hoti hay

**

Mujhay tum say muhabbat hay
Lekin zindagi hijabo’n mein lipti hay
Inhein palat’tay palat’tay
Zindagi guzr jaaey gi
Aur hamaray quloob
Jo jazbon ki hararat say dhaRktay hain
Aur hazaron meel dori say bhi
Aek dosray say marboot rehtay hain
Pighal kar khaak nasheen hojayen gay
Aur in mein dhaRktay jazbay
Mitti ko nam kar kay
Namood ki kisi nayi tashreeh ko janam dein gay

**

A meray mahboob
Kia ham Vaqa’ii muhabbat kartay hain
Ya muhabbat zadah dil lay kar
Khaak basar
Khud ko, yeh samajh kar dhoka detay hain
K hamaray tashnah hont amrat say aashna hochkay hain
Lekin hamaray jism kion pighal rahay hain
Ab tab mein yeh rizq e khaak honay ko hain
Thumaray honton par papRiya’n jam chuki hain
Kia tum mera Aks ho
Hamaray badan pani ban kar pighal rahay hain
Aur tashnagi ka ye Aalam hay keh
zindagi kay sehra mein
Rait kay har dosray zarray mein
Aek samundar thaTein maarta dikhayi de raha hay
Kia ham sarabo’n say nijaat panay k liye
Apni apni zindagi daan karsaktay hain

**

Muhabbat ko samajhnay kay liye ham zindagi bhar
Jazbo’n aur ahsasaat kay samundar mein
Ghotah-zan rehtay hain
Aakhri sans ka hachkola
Hamein aesi dunya mein baha kar lay jata hay
Jaha’n na muhabbat hay na nafrat
Jaha’n bandagi ka Vahid jazba
Aziyat aur rahat ki har do haalato’n mein
Jheel ki satah ki manind
Hamwaar rehta hay
Lekin kia koyi hatif-e-ghebi hamein ye khabar day sakta hay ke
Khobsorat jazbay ka tasalsul say parwaan chaRhna mumkin hay
Aur ye ke
Waqt kay aek qaleel Arsay mein
Zindagi kay naam say guzarnay walay Ajeeb o ghareeb lamhaat
Ki chalnii say nikalnay walay insaanon ka munatzir
Ik aesa jahan hay
Jahan insaan
Apnay andar muhabbat kay maadday ko khud janam day skay ga
Aur kosar ka pani
Is kay asar say mithaas ki aakhri hadon ko choolay ga
Agar aesa hay to
A mahboob
Aao, khushi khushi apni zindagia’n daan kardein
Lekin kia muhabbat nay hamein itna hoslah Ata kia hay
K ham moat aur zindagi kay falsafay ko
Samajhnay kay nazuk mqam par
Pooray qad k sath khaRay hosakein

Advertisements

4 comments on “!اے محبوب

  1. very thoughtful.good diction and message containing

  2. خدا جب کسی سے خوش ہوتا ہے تو اسے موحبّت عطا کرتا ہے
    اس طویل نظم میں آپ نے موحبّت کی سچآیی خوبصورتی سے بیان کی ہے اور اسے اس جہاں سے اٹھا کر وہاں لے گئے ہے جہاں ہم سب کو جانا ہے

    • واہ جناب، آپ کو اردو رسم الخط میں لکھتے دیکھ کر بہت خوشی ہوئی ہے …
      ممنون ہوں جناب نظم پر تبصرے کے لیے …
      آپ نے میرے بنیادی بلاگ پر آنا چھوڑ دیا ہے، ذرا وہاں کی اس پوسٹ پر تشریف لائیں، آپ سے کچھ کہا گیا ہے شاید …
      🙂

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: