2 Comments

آبرو کا نوحہ

آبرو کا نوحہ

ــ 30 دسمبر 2006 کو پھانسی پر چڑھنے والے صدام حسین کی ساتویں برسی پر ــ

ہوائیں
بلندیوں کو محبوب رکھنے والے
شاہینوں کو
اپنے دوش پر
اُن سربہ فلک رازوں تک پہنچانے کا
فریضہ انجام دیتی ہیں
جو زمیں زادوں کے لیے چیلنج ہیں
اگر وہ چٹانوں کو
اُلٹ دینے والے پُرقوت پروں کو
جھاڑ کر
خود کو ہوس سے محروم کرنا سیکھیں
اور سیاہ چادر تلے
دشمن پر کپکپی طاری کردینے والی
نگاہوں کو
چند آنسوؤں سے دھولیا کریں
♣♣
عیبوں کی نمایش کرتے کرتے
ہم نے اپنے وجود میں خوف کو جنم دیا ہے
اس لیے دشمن ہم پر مسلط ہے
مفتوح قومیں
ہوس کا خوش نما لباس پہن کر
اڑان کی گرمی سے محروم ہوجاتی ہیں
♣♣
اے شاہین
تو آبرو کے فلسفے کو نہ سمجھ سکا
تیری نگاہ شعلہ ساز نے
اپنے ہی خرمن کو چُنا
تیرے بازوئے ہمت نے
اپنے ہی لوگوں کی ہمت پست کردی
آبرو کا پرندہ
تیرے کندھے سے اڑتے وقت
رویا ضرور ہوگا
کہا ضرور ہوگا
میں تجھے ہم دوش ثریا کرسکتا تھا
لیکن تم نے عیبوں کے سائے میں
خوف کو جنم دے کر
خلعتِ ہوس زیب تن کرلیا
آخری لمحات میں
جب زمین سے تیرا رشتہ ٹوٹنے والا تھا
تو نے مجھے یاد کیا
لیکن تیرے دوش سے
میری نسبت ٹوٹ چکی تھی

Aabroo ka Noha

A free verse poem on 7th death anniversary of Saddam Hussein (December 30, 2006)

HawaayeN
Bulandion ko mahboob rakhnay walay
ShaaheenoN ko
Apnay dosh par
Un sar-ba-falak raazoN tak pohnchanay ka
Fareeza anjaam deti hain
Jo zameeN zaadoN k liye challenge hain
Agar wo chataanoN ko
Ulat denay wali pur-quwwat paroN ko
JhaaR kar
Khud ko hawas say mahroom karna seekhain
Aor siyah chaadar talay
Dushman par kapkapi taari kardenay wali
Nigahon ko
Chand aansowoN say dho lia karain
***
AaiboN ki numayish kartay kartay
Ham nay apnay wajood main khof ko janam dia hay
Isliye dushman ham par musallat hay
Maftooh qomain
Hawas ka khush-numa libaas pehen kar
Uraan ki garmi say mahroom hojati hain
***
A Shaheen
Tu aabroo k falsafay ko na samajh saka
Tairii nigaah-e-shula saaz nay
Apnay hi khirman ko chuna
Tairay baazooye himmat nay
Apnay hi logoN ki himmat past kardi
Aabroo ka parinda
Tairay kandhay say uRtay waqt
Roya zaroor hoga
Kaha zaroor hoga
Main tujhay ham-dosh-e-surayya karsakta tha
Lekin tum nay aiboN k saaye main
Khof ko janam dekar
Khil’at-e-hawas zaib-tan karlia
Aakhri lamhaat main
Jab zameen say taira rishta tootnay wala tha
Tu nay mujhay yaad kia
Lekin tairay dosh say
Meri nisbat toot chuki thi!

Advertisements

2 comments on “آبرو کا نوحہ

  1. ہم نے اس کی آخری رسم قسدا نہیں دیکھی تھہی کہ ہم دیکھ ہی نہیں سکتے تھے- سنا ہے ک اس نے کلمہ پڑھا تھا- الله اس کی مغفرت کرے- مغرور تھا اور ظالم بھی-

    • یہ بھی سنا ہے کہ اپنے دو دامادوں کو بغاوت کے جرم میں قتل کردیا تھا۔ انہی میں سے ایک بیٹی نے آخری دنوں میں اس کے لیے قانونی لڑاءی لڑی

Comments Please

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: